FORGOT YOUR DETAILS?

وفاق ایوانہائے تجارت وصنعت پاکستان اقوام متحدہ کے پائیدار ترقیاتی اہداف پر قومی سطح پر توجہ دینے کی ضرورت ہے

:(2022 Nov 26) کراچی (SDGs)

صدر ایف پی سی سی آئی عرفان اقبال شیخ نے اقوام متحدہ کے پائیدار ترقیاتی اہداف سے متعلق حوصلہ افزا پیش رفت پر اپنے اطمینان کا اظہار کیا ہے اور پاکستان میں سماجی طور پر مربوط کاروباری نمو کو کو فروغ دینے پر توجہ دینے کی ضرورت پر زور دیا ہے۔ایک بیان میں عرفان اقبال شیخ نے SDGsمدنظر رکھتے ہوئے کے لیے تاجر برادری کے عزم اور کوششوں کو سراہا۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ ایف پی سی سی آئی نے ''کمیونٹی کی SDGs ذمہ داریوں اور پائیدار ترقیاتی اہداف کے بارے میں آگاہی'' کے موضوع پر ایک اعل ٰی سطحی، بھرپور شرکت پر مبنی اور ُپر اثر سیمینار کا انعقاد کیا ہے۔ عرفان اقبال شیخ نے وضاحت کی کہ سماجی اور معاشی ترقی کے لیے کی جانے والی کوئی بھی کوشش بے سود ثابت ہوگی؛ اگر ان میں دو اہم آبادیاتی اعداد و شمار کو نظر انداز کیا جائے گا؛ یعنی کہ پاکستان میں خواتین کی تعداد کل آبادی کا 52 فیصد ہے اور ملکی آبادی کا 65 فیصد حصہ 35 سال سے کم عمر کے نوجوانوں پر مشتمل ہے۔ صدرایف پی سی وفاقی اور صوبائی (i: (سی آئی نے تیز رفتار اور پائیدار سماجی ترقی کے لیے تین جہتی حکمت عملی تجویز پیش کی ہے حکومتوں کو منصوبوں کے لیے صرف غیر ملکی فنڈنگ پر انحصار نہیں کرنا چاہیے اور ترقیاتی بجٹ اور نجی شعبے کی مدد ہمیں شفافیت اور اہداف کے حامل منصوبوں کے ساتھ بین االقوامی دو(ii (سے مقامی طور پر بھی منصوبے شروع کرنے چاہئیں نوجوانوں اور خواتین کوجاب مارکیٹ میں انٹری میں سہولت، مائیکرو، (iii (طرفہ اور کثیر الملکی ڈونرز سے رجوع کرنا چاہیے قائم کرنے میں آسانی اور کاٹیج انڈسٹریز کو ترغیبات۔ نائب صدرایف پی سی سی آئی (MSMEs (سمال اینڈ میڈیم انٹرپرائزز نمبر17کو پورا کرنے کے لیے مشترکہ کوششوں پر زور دیا؛جو کہ SDG کی ضرورت اور SDGsانجینئر ایم اے جبار نے ''مقاصد کے لیے شراکت داری'' کے اعنوان پر مبنی ہے۔ انہوں نے سامعین کے ساتھ قیمتی ہدایات فراہم کرنا اور مدد کو یقینی بنانا تجزیاتی اور تنقیدی تبصرے شیئر کیے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایف پی سی سی آئی کا پلیٹ فارم ایف پی سی سی آئی کی کی طرف سے کی جانے والی کوششوں کو پورا کرنے میں اپنا کردار ادا کرنے کے لیے SDGsسنٹرل سٹینڈنگ کمیٹی برائے کے کنوینر ڈاکٹر محبوب نظامی کی SDGs تیار ہے۔عرفان اقبال شیخ نے ایف پی سی سی آئی کی سنٹرل سٹینڈنگ کمیٹی برائے خدمات کو سراہا اور اس بات پر اپنے اطمینان کا اظہار کیا کہ ایف پی سی سی آئی ہمارے ملک میں صحت اور تعلیم کے شعبوں کا فریم SDGs کو سپورٹ فراہم کرنے میں اپنا موثر کردار ادا کر رہی ہے۔ مزید برآں، انہوں نے آگاہ کیا کہ اقوام متحدہ کے ورک پاکستان کے لیے جامع، اچھی اور پائیدار سماجی واقتصادی ترقی کی راہ پر گامزن کرنے کے لیے نہا یت اہمیت کا حامل ہے۔ عرفان اقبال شیخ نے اس بات پر زور دیا کہ ہمیں عوام اور معیشت کے مفاد میں 2030 سے پہلے انتہائی ضروری اقدامات لینے ہو نگے۔ اس سلسلے میں انسانی ہمدردی کی بنیاد پر پاکستان میں صحت، تعلیم اور دیگر فالحی منصوبوں کے لیے پرعزم انداز میں قومی اور بین االقوامی اداروں کے ساتھ رابطے کی اشد ضرورت ہے۔انجینئر ایم اے جبار نے مزید کہا کہ اقوام متحدہ کے ساتھ ہم آہنگ رہتے ہوئے پاکستان میں بہت کچھ کیا جا سکتا ہے؛کیونکہ معلومات اور فیلڈ تجربے کی SDGsکے زیراہتمام کوئی کمی نہیں ہے؛جیسا کہ پاکستان میں مختلف منصوبوں پر کام کرنے والے ماہرین کی طرف سے دی گئی پریزنٹیشنز کے دوران مشاہدہ کیا گیا۔

بریگیڈیئر افتخار اوپل، ایس آئی(ایم)، ریٹائرڈ

سیکرٹری جنرل

TOP