Press Release

صدر ایف پی سی سی آئی عبدالر ؤ ف عالم نے کہا کہ پاکستان اور بیلا روس کے درمیان اقتصادی اور تجارتی تعلقات کو فر و غ دینے کیلئے دو ونوں ممالک کی

صدر ایف پی سی سی آئی عبدالر ؤ ف عالم نے کہا کہ پاکستان اور بیلا روس کے درمیان اقتصادی اور تجارتی تعلقات کو فر و غ دینے کیلئے دو ونوں ممالک کیایف پی سی سی آئی ہیڈ آفس کرا چی(۱۰ مارچ ۲۰۱۶)صدر ایف پی سی سی آئی عبدالر ؤ ف عالم نے کہا کہ پاکستان اور بیلا روس کے درمیان اقتصادی اور تجارتی تعلقات کو فر و غ دینے کیلئے دو ونوں ممالک کی مصنوعات کی مارکیٹنگ پر زور دینا ہو گابیلاروس کے وزیر صنعت وتالی ووق کی27رکنی وفد کے ہمراہ پاکستان آمد اور پاکستان بیلا روس بزنس کو نسل کے دوسرے اجلاس میں شرکت کے دوران صدر ایف پی سی سی آئی نے مزیدکہا کہ دونو ں ممالک کے درمیان تقریبا18معاہدوں پر دستخط کےئے جا چکیں ہیں جس کے ذریعے دو نو ں ممالک کے درمیان تجا ر تی ،کاروباری،تعلیم اورثقا فتی ہم آہنگی بڑھے گی صدر نے یہ بھی کہاکہ دو نو ں ممالک کے درمیان دو طر فہ تجا ر ت کا موجود ہ حجم خا طر خواہ نہیں ہے ۔دو نو ں مما لک کے درمیان اس وقت 60ملین امریکی ڈاکر کی تجا ر ت ہورہی ہے جس میں پا کستانی بر آمدات صرف15ملین امریکی ڈالر اوربیلا روس درآمداد 43ملین امریکی ڈالر ہے۔صدر نے نشا ندہی کر تے ہوئے کہا کہ دونو ں ممالک کے درمیان کم تجا رت کی وجہ صرف چند مخصوص مصنوعات کی تجا ر تی بندش ہے جس کو ختم کر کے اورمصنوعات کی طر ف تو جہ دینی ہو گی جس میں کھاد، آٹو موبائل سیکٹر،کیمیکلز،ٹریکٹرز اور زرعی مصنوعات شامل ہیں ۔ بیلا روس کا اعلیٰ سطح کا وفدوزیر صنعت وتالی ووُق کی سر بر اہی میں کر ا چی پہنچ گیااور ایف پی سی سی آئی کی پاکستان۔بیلاروس بزنس کو نسل کے دوسرے اجلاس میں شرکت کی۔ وفد نے دوطرفہ تجار تی اور اقتصادی تعلقات کے موضوع پہ میرٹ کر اچی میں تبا دلہ خیال کیا۔ دو نوں ممالک نے وزیراعظم نوازشریف کے دورے کے دوران منعقد پاکستان ۔بیلاروس بزنس کونسل کے پہلے اجلاس کے موقع پر مفا ہمت کی یاداشت (MOU)پہ اگست2015میں دستخط کئے تھے ۔

جناب ایس ایم منیر ،چیف ایگزیکٹو ،ٹی ڈیپ نے بطور مہما ن خصوصی اجلاس میں شرکت کی اور اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دنیا کی مصنوعات کا
مقا بلہ کرنے کیلئے بین الاقوامی معیار اور اسٹینڈرڈ کے بر ا بر کی مصنوعات بنا نا ہو نگی جنھیں دونو ں ممالک کی مصنوعات کو بین الاقوامی سطح پرپذیرائی حاصل
ہو گی۔ انہوں نے بیلا روس کے وفد کوسہرا ہا اور کہا کہ دو نو ں ممالک کے درمیان تجا ر تی ہم آہنگی کا آغاز پچھلے سال وزیر اعظم پاکستان اور صدر بیلاروس کی
ملاقا ت سے ہی ہو گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ دونو ں ممالک 60 ملین امریکی ڈالر سے اوپر اپنی تجا ر ت کو لے جانے کی صلاحیت رکھتے ہیں اور موجودہ حجم
دونو ں مالک کی موجو دہ صلاحیت کی عکا سی نہیں کر رہا ۔انہوں نے کہا کہ یہ بہتر ین وقت ہے کہ دونو ں ممالک سرمایہ کا ری کے مواقع کے حصو ل پر کام کریں ۔اجلاس میں پاکستان کی طر ف سے خطاب کرنے والوں میں خا لد تواب (سینئرنائب صد،ایف پی سی سی آئی) ،ڈاکٹر مرزا اختیار بیگ (چیف ایگزیکٹو آفیسر، پاک ڈینم)، بر سگیسڈیر(ریٹا ئرڈ) طارق خلیل(کو ۔چےئرمین ،پاک بیلاروس جوائنٹ بزنس کونسل)، عبدالرشد آبڑو اور یعقوب شیخ(ممبرز،پاکستان بیلاروس بزنس کونسل) شامل تھے جبکہ بیلاروس سے خطاب کرنے والوں میں وزیر صنعت بیلاروس وتالی ووق،سفیر بیلاروس اینڈرے ارمولووچ اور ڈائریکٹر جنرل بیلا روس چیمبر آف کامر س والیری لابوم شامل تھے۔اجلاس میں ایف پی سی سی آئی کے نائب صدور ذولفقارعلی شیخ،حنیف گو ہر اور ارشد وہرہ بھی موجود تھے۔

وزیر صنعت بیلاروس وتالی ووق نے پاکستان کی مہما ن نوازی کو سہراہا اور پاکستان میں موجود سرما یہ کاری کے ذریع کی نشا ندہی کی۔ اجلاس میں دونوں ممالک کے اعلی سطح کے حکام جن کا تعلق معروف صنعت اور کمپنیوں سے ہے اپنے مشا ہدے کی روشنی میں مختلف موضو عات پہ گفتگو کی۔مشترکہ بزنس کونسل کے ممبران مختلف سیکٹرز،بالخصوص ٹریکٹرز، زرعی مشینری،ٹیکسٹا ئل،ریڈی میڈگارمنٹس،زیورات،صحت کی مصنوعات ،طبی آلات،کھاد،تیل اور گیس کی باہمی تجارت پہ غورکیا۔

مہر عالم خان قائم مقام سیکریٹری جنرل( ایف پی سی سی آئی )