Press Release

آسان کاروباری عمل کی راہ میں حائل سب سے بڑے مسائل میں بلند شرح ٹیکس اور کرپشن ہیں۔ پاکستان میں آسان کاروباری عمل کو بہتر بنانے اور عالمی سط

ایف پی سی سی آئی ہیڈ آفس کرا چی(۲۷ فروری ۲۰۱۶) عبدالرؤف عالم صدر فیڈریشن آف پاکستان چیمبر آف کامر س اینڈ انڈسٹری نے ورلڈ بینک گروپ کی رپورٹ جس میں آسان کاروباری عمل کی فہرست میں پاکستان کا درجہ کم سطح پردکھا یاگیاجو کہ2015میں136 سے2016میں138پر آگیا ہے۔انہوں نے حیرت کا اظہار کر تے ہوئے کہاہے کہ پاکستان کے درجہ میں کمی کی بڑی وجہ پاکستان میں کاروبار شروع کر نے کیلئے بینکو ں سے قر ضو ں کے حصول کا طریقہ کارکو ٹہرایا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ مانیٹری اتھار ٹینرکا کہنا ہے کہ پاکستان میں پرائیویٹ سیکٹرکو قر ضہ دینے کیلئے کمرشل بینکنگ کیلئے ماحول ساز گار ہے۔

عبدالرؤف عالم نے بتایاکہ ورلڈ اکنامک فورم نے بھیBusiness Competitivenessپر اپنی ایک رپورٹ میں بینکو ں کے قر ضو ں تک آسان رسا ئی کی درجہ بندی میں پاکستان کو90نمبر پر دکھا یا ہے۔جبکہ گلو بلCompetitiveness انڈکس میں پاکستان کا درجہ 140ممالک میں سے126نمبر پر ہے۔انہوں نے کہا کہ گلو بلCompetitivenessکی درجہ بندی کی بنیاد 12بڑے انڈیکیٹرزہوتے ہیں، انہوں نے کہاکہ پاکستان مارکیٹ سا ئز کے حوالے سے بہتر پوزیشن میں ہے ۔ لیکن میکرواکنامک پالیسیوں ،لیبر مارکیٹ کی کار کر د گی ۔صحت اور بنیادی تعلیم کے لحا ظ سے اسکی پوزیشن اچھی نہیں ہے۔

عبدالرؤ ف عالم نے کہا کہ ورلڈ اکنامک فورم کے مطابق آسان کاروباری عمل کی راہ میں حائل سب سے بڑے مسائل میں بلند شرح ٹیکس اور کرپشن ہیں۔
عبدالرؤف عالم نے بتایا کہ حکومت نےFPCCIکی تجو یز پر آسان کاروباری عمل کیلئے بشیر علی محمد کی سر بر ا ہی میں ایک ہا ئی پاور کمیٹی تشکیل دی ہے۔ جن کے سا تھ صدر FPCCIچےئرمین بورڈ آف انویسٹمنٹ ،چےئرمین فیڈرل بورڈ آف ریونیواور چا رو ں صو بو ں کے چیف سیکٹر یٹری بھی اس کمیٹی میں شامل ہیں۔انہوں نے کہا کہFPCCIمارچ کے مہینے میں اس معاملے پر اپنی ایک جامع رپورٹ شا ئع کریگی جس میں پاکستان میں آسان کاروباری عمل کو بہتر بنانے اور عالمی سطح پر پاکستان کی درجہ بندی کو بہتر کرنے کیلئے تجا و یز بھی ہو نگی۔
مہر عالم خان
قائم مقام سیکریٹری جنرل( ایف پی سی سی آئی )