Press Release

ایران پر سے تجا ر تی پا بندیوں کے خا تمہ سے اسلام آباد، تہران،استنبول/کار گو ٹرین کامیاب ہو گی۔

ایف پی سی سی آئی ہیڈ آفس کرا چی(۲۰ فروری ۲۰۱۶) فیڈریشن آف پاکستان چیمبر آف کامر س اینڈ انڈسٹری کے صدر عبدالرؤف عالم نے ایران سے تجا ر ت پر پابندی ہٹا نے کے فیصلہ پر خو شی کااظہارکیا اور کہا کہ اس فیصلہ سے ایران کے ساتھ باہمی تجا ر تی معا شی تعلقات پر مثبت اثر پڑیگا۔انہوں نے فنا نس سینٹر اسحا ق ڈار کو سراہتے ہو ئے توقع ظا ہر کی کہ اب ایران کے ساتھ تمام معا شی منصو بہ بحال
ہو نگے۔ایران پاکستان گیس پائپ لائن کا منصو بہ اور ایران سے1000میگاواٹ بجلی کی امپورٹ جیسے اہم معا شی منصو بے اب موجودہ
تنا ظر میں بہتر طور پر بحال ہونگے،انہوں نے مزید کہاکہ ایران سے امپورٹڈ بجلی ہمیں IPPsکی بجلی سے سستی پڑتی ہے لیکن فی الوقت ہم ایران سے تقریبا100میگاواٹ بجلی امپورٹ کر رہے ہیں جسکو ہمیں3000میگاواٹ تک بڑھانا چا ہیے۔

انہوں نے ایران سے تجا ر تی پابندیوں کے خا تمہ اور پاکستان کی ایران کے ساتھ با ہمی تجا ر ت پر ممکنہ اثرات کے بارے میں بتایا کہ پاکستان اور ایران پڑوسی ممالک اور روایتی ٹریڈ نگ پارٹنرز ہیں اور دونوں ممالک ٹریڈ لبرالائزیشن کے حامی ہیں اور سکے لئے دونوں ملکوں کی نیشنل چیمبر ز آف کامر س کے زیر سر پر ستی جوائنٹ بزنس کو نسل بھی2001میں قا ئم کی گئی انہوں نے کہا کہ پاکستان اور ایران کے مابینPTAتجا ر تی تر جیحی معاہدہ موجود ہونے کے باوجود باہمیتجا ر ت 2010-11میں ایک دم 431.765میلین ڈالر پر آ گئی جوکہ 2009-10میں1220.90میلین ڈالر اور 2008-9میں1321.59میلین ڈالر تھی۔

عبدالرؤف عالم جو کہ FPCCIکیساتھ ساتھ ECOچیمبر آف کامر س اینڈ انٖڈسٹری کے صدر بھی ہے نے مزید کہا کہ پاکستان اور ایران کے مابین با ہمی تجا ر ت میں5بیلین ڈالر تک اضا فہ ہو سکتا ہے کیونکہ دونوں ملکوں میں مختلف سیکٹرز میں تجا ر ت کے فر و غ کے وسیع امکانات موجود ہیں،انہوں نے حکومت کے اس فیصلہ کو دونوں ملکوں کی با ہمی تجار ت کے فر و غ کیلئے ایک انقلاب اقدام قرار دیا۔انہوں نے اس تنا ظر میں حکومت کی توجہ ایران کے ساتھ فوری طور پر بینکنگ چینل قا ئم کرنے کی طرف بھی مبذول کر وا ئی جس کی اشد ضرورت ہے۔
انہوں نے کہا کہ پاکستان اور ایران دو نو ں ممالک(ECO)اکنامک کو آپر یشن آرگنا ئزیشن کے ممبرممالک بھی ہیں جہاں ECOریجن میں بزنس ریٹنگ پر و گر ا م کے تحت ایک علیحدہ ایجنسی کے قیام کا معا ملہ بھی زیر غو ر ہے اور (ECO)کے تحت اسلام آباد ،تہران، استنبولITIکار گو ٹرین کے منصو بہ سے علا قائی سطح پر بھی تجا ر ت میں اضا فہ ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ ایران پر سے تجا ر تی پا بندیاں ختم ہونے سےITIکارگو ٹرین بھی کامیاب ہو گی کیو نکہ (ECO)کی ریجنل پلا ننگ کو نسل RPCکی تہران میں ہونے والی حا لیہ اجلاس اور سکے بعدانقرہ میں ہونے والے(ECO )چیمبر آف کامر س اینڈ انڈسٹری کی ایگزیکٹو کمیٹی کے اجلاس میں بھی یہ فیصلہ کیا گیا کہITIکارگو ٹرین میں مسا فر وں کو بھی شامل کیا جا ئیگا جس سے یہ منصو بہ کا میاب ہو گا ۔

انہوں نے مزید کہا کہ ECOممبر ممالک کے درمیانFTAبھی زیر غو ر ہے جسکے بعد ECOممبر ممالک بشمول ایران کے سا تھ پاکستان کی با ہمی تجا ر ت سر و سز سیکٹر ،انوسٹمنٹ بینکنگ اینڈ فنا نس ،صنعتی اور زرعی سیکٹر میں بہت اضا فہ ہو گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایران کے سا تھ تجار ت کھلنے سے پاک چا ئنا اکنامک کو ریڈور پربھی مثبت اثرپڑیگا جبکہ پاکستان کی ایران اور
جغر افیائی سر حدوں اور مذہبی آہنگی اور دیگر عنا صر کی وجہ سے آنیوالے دنوں میں ایران کے سا تھ پاکستان کی تجا رت میں اضافہ کے روشن امکانات ہیں۔

مہر عالم خان
قائم مقام سیکریٹری جنرل( ایف پی سی سی آئی )