Press Release

پاکستان جنو بی امریکہ کی مارکیٹ تجارت کیلئے تلاش کرے

مورخہ:۲۰۱۶۔۹۔۲۴ :شیخ خالد تواب قائم مقا م صدر ایف پی سی سی آئی نے جنو بی امریکہ کی تجارت کی مارکیٹ جو کہ تلاش نہیں کی جا سکتی پر تشویش کا اظہار کر تے ہوئے کہا کہ جنو بی امریکہ کی مارکیٹ اس وقت 400ملین لوگوں سے زائد کی ہے جسکی فی کس آمدنی بارہ ہزار ڈالر کے قریب ہے انہوں نے کہا کہ ارجنٹا ئن ،برازیل،پیرو،وینزویلا،چلی اور کچھ دوسرے ممالک پاکستان میں اسپورٹس، جغرافیہ،ثقافت اور نسل کے لحاظ سے تعارف کے محتاج نہیں لیکن اقتصادی اور معاشی لحاط سے تجارت اور سرمایہ کا ری کیلئے یہ تمام ممالک اب تک غیر دریافت یا فتہ ہیں۔ معلومات کی کمی ،باہمی مفا ہمت ،کاروباری ملاقاتیں اور لوگوں کے درمیان میل جول کی کمی وہ وجوہات ہیں جو کہ اقتصادی روابط میں کمی کی وجہ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ MERCOSURجوکہ جنو بی امریکہ کا سب سے بڑا تجا ر تی بلاک ہے نے پاکستان کے ساتھ تجا ر تی معاہدے جو لائی 2006میں دستخط کیا تھا جسکا مقصد تر جیحی(Preferential)تجارتی معاہدے سے متعلق مذاکرات کے عمل کا آغاز کرنا تھا لیکن اس معاہدے کے نفاذ کے متعلق کوئی معلومات موجود نہیں ہیں دوسری جانب سے پاکستان جنو بی امریکہ کے ساتھ گلو بل سسٹم آف ٹریڈ پریفر نسیز کے معاہدے میں بھی رکن ہے جو کہ 1989میں دستخط ہوا اور WTOکے معاہدے کے علاوہ ہے اس معاہدے کی فعالیت کے اثرات نظر نہیں آئے۔

انہوں نے مزید کہا کہ جنو بی امریکہ کی عوام قومیت کے لحاظ سے یورپ، اسپین،پرتگال اور امریکہ کے لوگو ں سے ملتی ہے جو کہ اس بات کو ظاہر کر تی ہے کہ وہاں تجا ر ت کے مواقع موجود ہیں۔ انہوں نے اعدادوشمار کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ جنو بی امریکہ کا حصہ پاکستان کی
بر آمدات کی مارکیٹ میں0.6فیصد اور درآمدات کی مارکیٹ میں1.6فیصد ہے انہوں نے حکومت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ وہ اس خطے میں موجو د پاکستان سفارتکار جو ارجنٹا ئن ،برازیل،چلی اور دوسرے مماک میں موجود ہیں کو استعمال کرے کہ وہ اس خطے میں موجود تجا ر تی مواقع تلاش کریں اور اس کے ساتھ ساتھ ڈسپلے سینٹر بھی پاکستان سفارتخا نوں میں کھولیں تاکہ پاکستان کی اشیا ء کی نمائش ہو سکے اس کے علاوہ حکومت کو چا ہیے کہ وہ اپنے FACT FINDINGمشن اور تجا ر تی وفود تیار کریں جو ان ممالک میں تجارت کے مواقع تلاش کریں انہوں نے کہا ان ممالک میں پاکستان کی روایتی اشیا ء جیسا کہ چاول ،کھیلوں کے سامان ،آم ،کینو ،سرجیکل آلات، زراعت پر مبنی اشیا ء ،ماربل ،ادویات،چمڑے اور ٹیکسٹائل کے برآمدات کے مواقع موجود ہیں۔پاکستان اس خطے میں موجو د تجا ر تی مواقعوں سے فا ئدہ اب تک نہیں اٹھا سکا لیکن حکومت سطح پرپاکستان کے تعلقات ارجنٹا ئن،چلی،برازیل، اور ویننرویلا کے ساتھ بڑے دوستانہ ہیں انہوں نے مزید کہا کہ ارجنٹا ئن کے ساتھ تعلقات کو مزید وسعت دینے کی ضروت ہے کیونکہ یہ جنوبی امریکہ کے با قی ممالک تک رسائی کا ذریعہ ہے۔اس کے علاوہ نمائشوں کا انعقاد اور جنو بی امریکہ کے خطے میں ہونے والی نمائشوں میں شرکت بھی ہما رے تجا ر تی تعلقات بہتر کرنے میں مدد دے سکتی ہے۔انہوں نے جنو بی امریکہ میں حلال اشیاء کی برآمدات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جنو بی امریکہ 820ملین ڈالر کی حلال اشیا ی کی مارکیٹ ہے اور پاکستان کو چا ہیے کہ وہ اس مارکیٹ کو حلال اشیاء فراہم کریں۔